Islam Online
  

Ramadan - رمضان المبارک

Ramadan in Pakistan: This is the name of the 9th month of the islamic calendar, the month of Fasting. Ramadan in 2012 will start on Saturday, the 21st of July 2012 (+/- 1 day according to the actual sight of the moon) and will continue for 30 days until Sunday, the 19th of August. Pakistan Holidays Calendar

The Month of Ramadan »
Ramadan (also written as Ramazan, Ramzan, Ramadhan, Ramdan, Ramadaan) is the ninth month of the Islamic calendar. It is the Islamic month of fasting, in which participating Muslims refrain from eating, drinking from dawn until sunset. Fasting is meant to teach the Muslim patience, modesty and spirituality.

Ramadan is a time for Muslims to fast for the sake of Allah and to offer more prayer than usual. During Ramadan, Muslims ask forgiveness for past sins, pray for guidance and help in refraining from everyday evils, and try to purify themselves through self-restraint and good deeds. As compared to the solar calendar, the dates of Ramadan vary, moving backwards about ten days each year as it is a moving holiday depending on the moon. Ramadan was the month in which the first verses of the Qur'an were said to be revealed to the Islamic Prophet Muhammad.

Laylat al-Qadr or Shab-e-Qadr »
Sometimes referred to as "the night of decree or measures", Laylat al-Qadr also known as Shab-e-Qadr is considered the most holy night of the year during the month of Ramadan, as it is the night in which the Qur'an was revealed to Muhammad. Muslims believe it to have occurred on an odd-numbered night during the last 10 days of Ramadan, either the night of the 21st, 23rd, 25th, 27th or 29th (in Sunni thought) or the 19th, 21st or 23rd (in Shi'a thought).

Fasting in Ramadan »
The most prominent event of this month is fasting. Every day during the month of Ramadan, Muslims around the world get up before dawn to eat Sahur or Sehri or Sahari (meaning "something we eat at Sahar"), then they perform the fajr prayer. They have to stop eating and drinking before the call for prayer starts until the fourth prayer of the day, Maghrib. Muslims break their fast at Maghrib (at sunset) prayer time with a meal called Iftar. Muslims may continue to eat and drink after the sun has set until the next morning's fajr prayer call. Then the process starts all over.

Ramadan is a time of reflecting and worshiping God. Muslims are expected to put more effort into following the teachings of Islam and to avoid obscene and irreligious sights and sounds. Sexual activities during fasting hours are also forbidden. Purity of both thoughts and actions is important. The fast is intended to be an exacting act of deep personal worship in which Muslims seek a raised awareness of closeness to God.

The act of fasting is said to redirect the heart away from worldly activities, its purpose being to cleanse the inner soul and free it from harm. It also allows Muslims to practice self-discipline, self-control, sacrifice, and empathy for those who are less fortunate; thus encouraging actions of generosity and charity (Zakat).

Who should observe & who are exempt from fasting:
Muslims should start observing the fasting ritual upon reaching the age of puberty, so long as they are healthy, sane and have no disabilities or illnesses. The elderly, the chronically ill, and the mentally ill are exempt from fasting, although the first two groups must endeavor to feed the poor in place of their missed fasting. Also exempt are pregnant women, women during the period of their menstruation, and women nursing their newborns. A difference of opinion exists among Islamic scholars as to whether this last group must make up the days they miss at a later date, or feed poor people as a recompense for days missed. While fasting is not considered compulsory in childhood, many children endeavour to complete as many fasts as possible as practice for later life. Lastly, those traveling (musaafir) are exempt, but must make up the days they miss. More specifically, Twelver Shī‘ah define those who travel more than 40 mi (64 km) in a day as exempt.

Hukm for Elderly & Disable:
The elderly or those who suffer from a disability or disease and have no prospect of getting better in the future can pay the cost of Iftar for a person who cannot afford it, or else they can host such a person in their house and have him eat with them after sunset as a way of repaying for the days they could not fast.

Breaking the fast accidentally:
A person who is observing Ramadan might break the fast accidentally, due to having forgotten it. In such an instance, one might spit out the food being eaten or cease the forbidden activity, immediately upon remembering the fast. This can usually happen in the early days of Ramadan because that person might have not yet been acclimated into fasting from dawn till dusk.

Ramadan: The Month of Virtues and Blessings
According to a well-known hadith, the person who observes Ramadan properly will have all their past sins forgiven. According to another, "When Ramadan arrives, Heaven's gates are opened, Hell's gates are closed, Satan is chained up and jinns are also locked up" and who ever dies will enter paradise.

Prayers & Reading Qur'an »
In addition to fasting, Muslims are encouraged to read the entire Qur'an. Some Muslims perform the recitation of the entire Qur'an by means of special prayers, called Tarawih, which are held in the mosques every night of the month, during which a whole section of the Qur'an (Juz', which is 1/30 of the Qur'an) is recited. Therefore the entire Qur'an or Hatm-ul-Quran would be completed at the end of the month.

Ramadan is also a time when Muslims are to slow down from worldly affairs and focus on self-reformation, spiritual cleansing and enlightenment; this is to establish a link between themselves and God through prayer, supplication, charity, good deeds, kindness and helping others. Since it is a festival of giving and sharing, Muslims prepare special foods and buy gifts for their family and friends and for giving to the poor and needy who cannot afford it; this can involve buying new clothes, shoes and other items of need. There is also a social aspect involving the preparing of special foods and inviting people for Iftar.

In many Muslim and non-Muslim countries with large Muslim populations, markets close down in the evening to enable people to perform prayers and consume the Iftar meal – these markets then re-open and stay open for a good part of the night. Muslims can be seen shopping, eating, spending time with their friends and family during the evening hours.

Eid ul-Fitr »
The Islamic holiday of Eid ul-Fitr marks the end of the fasting period of Ramadan and the first day of the following month, after another new moon has been sighted. The Eid falls after 29 or 30 days of fasting, per the lunar sighting. Eid ul-Fitr means the Festival of Breaking the Fast; a special celebration is made. Food is donated to the poor (Zakat al-fitr); everyone puts on their best, usually new, clothes; and communal prayers are held in the early morning, followed by feasting and visiting relatives and friends. The prayer is two Raka'ahs only, and it is optional (mustahabb) prayer as opposed to the compulsory five daily prayers. Muslims are expected to do this as an act of worship, and to thank God.
اسلامي سال کے نويں ميہنے کو رمضان المبارک کہا جاتا ہے، حضور نبي کريم عليہ الصلواتھ والسلام کا ارشاد ہے کہ يہ اللہ کا مہينہ ہے رمضان المبارک کي فضيلت کے بارے ميں ايک حديث پاک ميں آتا ہے، کہ حضرت ابو ہريرہ نے فرمايا کہ حضور نبي کريم نے ارشاد فرمايا کہ جب رمضان کا مہينہ شروع ہوجاتا ہے تو آسمان کے دروازے کھول دئيے جاتے ہيں اور ايک روايت ميں ہے کہ جنت کے دروزے کھول دئيے جاتے ہيں اور جہنم کے دروازے بند کردئيے جاتے ہيں، اور شياطين زنجيروں ميں جکڑ دئيے جاتے ہيں اور ايک روايت ميں آتا ہے کہ رحمت کے دروازے کھول دئيے جاتے ہيں۔ بخاري و مسلم

ايک اور حديث پاک ميں آتا ہے کہ سلمان فارسي فرماتے ہيں کہ حضور سرورکائنات نے شعبان کے آخر ميں وعظ فرمايا اے لوگوں تمہارے پاس عظمت والا مہينہ آيا ہے وہ مہينہ جس ميں ايک رات ہزار مہينوں سے بہتر ہے اور اسکے روزے اللہ تعالي نے فرض کئے اور اس کي رات ميں قيام کرنا تطوع يعني نفل قرار ديا ہے، جو اس ميں نيکي کا کوئي کام يعني عبادت کرے تو ايسا ہے جيسے اور مہينہ ميں فرض ادا کيا، اور جس نے ايک فرض ادا کيا تو ايسا ہے جيسے دونوں ميں ستر فرض ادا کيا، يہ صبر کا مہينہ ہے اور صبر کا ثواب جنت ہے اور يہ ہے کہ غم خواري کا مہينہ ہے اور اس مہينہ ميں مومن کا رزق بڑھ جاتا ہے، جو اس ميں روزہ دار کو افطار کرائے اس کے گناہوں کيلئے مغفرت ہے اور اس کي گردن جہنم سے آزاد کردي جائے گي، اور اس ميں افطار کرانے والے کو ويسا ہي ثواب ملےگا جيسا روزہ رکھنے والے کو ملے گا، بغير اس کے کہ اس کے ثواب ميں کچھ کمي نہ واقعہ ہوئي، ہم نے عرض کيا يارسول اللہ ہم ميں سے ہر شخص وہ چيز نہيں پاتا يہ ثواب جس سے وہ روزہ افطار کرائے، حضور نے فرمايا، اللہ تعالي يہ ثواب اس شخص کو بھي دے گا جو ايک گھونٹ دودھ يا ايک کھجور يا ايک گھونٹ پاني سے افطار کرائے گا، جس نے روزہ دار کو پيٹ بھر کھر کھانا کھلايا اس کو اللہ تعالي ميرے حوض سے سيراب کرےگا، کبھي پياسا نہ رہے گا، يہا تک کہ جنت ميں داخل ہوجائے گا، يہ وہ مہينہ ہے کہ کہ اس کا پہلا عشرہ رحمت دوسرا عشرہ مغفرت اور اس کا آخري عشرہ دوزخ سے آزادي کا ہے، اور جو اپنے غلام پر اس مہينہ ميں تخفيف کرے گا يعني کام لينے ميں کمي کردے تو اللہ تعالي اسے بخش دے گا اور جہنم سے آزاد فرمائے گا۔

روزہ اور نماز تراويح۔

رمضان المبارک کے مہينہ ميں روزہ رکھنا ہر مسلمان مرد و عوورت پر فرض ہے، اس کے علاوہ نماز عشا کے بعد نماز تراويح پڑھنے کي بھي بہت زيادہ فضيلت ہے، چنانچہ حضرت ابو ہريرہ فرماتے ہيں کہ حضور نے فرمايا کہ جو شخص صدق دل اور اعتقاد سے صيح کے ساتھ رمضان ميں قيام کرے گا يعني تراويح پڑھے گا تو اس کے اگلے پچھلے گناہ معاف کردئيے جائيں گے۔ مسلم شريف

پہلي شب

رمضان المبارک کے مہينہ کي پہلي شب کو نماز عشا کے بعد ايک مرتبہ سورہ فتہ پڑھنا ثواب عظيم حاصل کرنے کا باعث ہوتا ہے، رمضان المبارک کي پہلي شب نماز تہجد کي ادائيگي کے بعد آسمان کي طرف چہرہ کرکے بارہ مرتبہ يہ دعا پڑھے تو بفضل باري تعالي اللہ تعالي بہت سي نعمتيں اسے حاصل ہوں گي، اللہ تعالي فضل و کرم نازل ہوگا۔

لا الہ الااللہ الحي القيمو القائم علي کل۔

روزانہ کا وظيفہ۔

جو کوئي رمضان لمبارک کے مہينہ ميں ہر نماز کے بعد تين مرتبہ يہ دعا پڑھے گا

استغفر اللہ العظيم الذي لا الہ الہ الا ھو الحي القيوم اليہ توبتہ عبد ظالم لايملک نفسہ ضر ولا تفعاولا موتاولاحياتھ ولا نشورا۔

اس کے پڑھنے سے انشا اللہ گناہوں کي معافي عطا ہوگي، اللہ تعالي اپنے فضل و کرم سے نيکي کے کاموں کے کرنے ميں توفيق عطا کرے گا۔

شب قدر۔

رمضان المبارک کے مہينہ کے آخري عشرہ ميں عبادت کرنے کا ثواب بہت زيادہ ہے، اسي آخري عشرہ ميں شب قدر بھي ہے، جو بڑي بابرکت اور فضيلت والي رات ہے، اس رات ميں عبادت الہي کرنے والے کو اللہ تعالي خصوصي انعام و اکرام سے نوازتا ہے۔

حضرت عائشہ صديقيہ فرماتي ہيں کہ حضور سرورکائنات فرماتے ہيں، کہ رمضان کے آخري عشرہ کي طاق راتوں ميں شب قدر کو تلاش کرو۔ بخاري شريف

ليلتہ القدر کي فضيلت کے بارے مين ايک حديث پاک ميں آتا ہے کہ حضرت ابو ہريرہ فرماتے ہيں کہ حضور نبي کريم نے ارشاد فرمايا کہ جو شخص ايمان کے ساتھ ثواب کي اميد سے روزہ رکھے گا اور اس کے اگلے گناہ بخش دئيے جائيں گے، جو ايمان کے ساتھ ثواب کي نيت سے رمضان کي راتوں میں قيام يعني عبادت کرے گا تو اس کے اگلئ گنا بخش دئي جائيں گے اور جو ايمان کے ساتھ ثواب حاصل کرنے کي غرض سے ليتہ القدر ميں قيام کرے گا تو اسکے اگلے گناہ بخش ديے جائيں گے۔

شب قدر ميں عبادت کا انعام۔

حضرت انسي فرماتے ہيں کہ حضور سرورکائنات نے ارشاد فرمايا کہ شب قدر آتي ہے تو جبريل کي جماعت کے ساتھ آتے ہيں اور ہر اس بندہ کيلئے دعا مغفرت کرتے ہيں کہ جو کھڑے ہوکر يا بيٹھ کر اللہ تعالي کے ذکر ميں مشغول ہوتا ہے، پھر جب انہيں عيد الفطر کا دن نصيب ہوتا ہے، تو اللہ تعالي اپنے ان بندوں پر اپنے فرشتوں کے سامنے اپني خوشنودي کا اظہار کرتا ہے اور فرماتا ہے کہ اے ميرے فرشتوں اس مزدور کي اجرت کيا ہے، جو اپنا کام پورا کردے، فرشتے عرض کرتے ہيں کہ اے ہمارے رب اس کي اجرت يہ ہے کہ اس کو پورا معاوضہ ديا جائے، اللہ تعالي فرماتا ہے کہ اے ميرے فرشتوں ميرے بندوں اور ميري لونڈيوں نے ميرے مقرر کئيے ہوئے فرض کو ادا کيا اب وہ گھروں سے دعا کيلئے عيدگاہ کي طرف نکلے ہيں، مجھے قسم ہے اپني عزت کي، اپنے جلال کي، اپني بخشش و رحمت کي اپني عظمت کي اور اپني رفعت مکان کي ميں ان کي دعانوں کو قبول کروں گا، پھر اللہ تعالي فرماتا ہے کہ اے ميرے بندو اپنے گھروں کو لوٹ جائوں ميں نے تم کو بخش ديا، اور تمہاري برائيوں کو نيکيوں ميں بدل ديا، حضور فرماتے ہيں کہ پس مسلمان واپس ہوتے ہيں عيدگاہ سے اس حال ميں کہ ان کے گناہوں بخش دئيے جاتے ہيں۔ بيہقي

آخري عشرہ۔

حضرت عائشہ صديقي فرماتي ہيں کہ حضور سرورکائنات رمضان المبارک کے آخري عشرہ ميں جس قدر طاعت وعبادت کيلئے کوشش فرماتے تھے اتني کسي دوسرے عشرہ ميں نہ فرماتے تھے۔ مسلم شريف

شب قدر کي دعا۔

غضرت عائشہ صديقہ فرماتي ہيں کہ ميں نے حضور سرورکائنات سے پوچھا کہ يارسول اللہ اگر مجھے شب قدر معلوم ہوجائے تو ميں اس ميں کيا کروں؟ آپ نے فرمايا يہ دعا پڑھو۔ الھم انک عفو تحب العفوفاعفعني

ليلتہ القدر۔

جيسا کہ حضور نبي کريم کا ارشاد مبارک ہے کہ ليلتہ القدر رمضان المبارک کے آخري عشرہ کي طاق راتوں ميں سے ہے، اس لئے ہر مسلمان مرد عورت کو يہ کوشش کرني چاہيئے کہ وہ آخري عشرہ کي طاق راتوں ميں بھر پور خشوع و خضوع اور عاجزي و انکساري سے اپنے رب کے حضور مناجات کرے، نوافل ادا کرے ، ذکر الہي کرے، حضور پر زيادہ سے زيادہ درود پاک پڑھے اور شب بيداري کرتے ہوئے خوب عبادت کرے، اللہ تعالي خصوصي فضل و کرم نازل فرمائے گا اور گناہوں کي معافي عطا فرمائے گا۔

ليلتہ القدر کے بارے ميں ايک حديث پاک ميں اس طرح سے وارد ہے کہ حضرت ابو سعيد خدري فرماتے ہيں کہ حضور نے رمضان المبارک کے پہلے عشرہ ميں اعتکاف فرمايا اور دوسرے عشرہ ميں اعتکاف فرمايا، پھرجس ترکي خميہ ميں اعتکاف فرمارہے تھے، اپنا سر مبارک باہر نکال کر ارشاد فرمايا کہ ميں نےپہلے عشرہ کا اعتکاف شب قدر کي تلاش اور اہتمام کي وجہ سے کيا تھا، پھر اسکي وجہ سے دوسرے عشرہ ميں کيا، پھر مجھے کسي بتانے والے نے بتايا کہ وہ رات آخري عشرہ ميں ہے لہذا جو لوگ ميرے ساتھ اعتکاف کررہے وہ آخري عشرہ ميں کا بھي اعتکاف کريں، مجھے يہ شب ليتہ القدر دکھا گئي تھي، اس کي نشاني يہ ہے کہ ميں نے اپنے آپ کو اس شب کے بعد صبح ميں کيچڑ ميں سجدہ کرتا ديکھا لہذا اب اس کو آخري عشرہ کي طاق راتوں ميں تلاش کرو، راوي فرماتے ہيں کہ اس شب کو بارش ہوئي اور مسجد چھپر کي تي وہ ٹپکي اور ميں اپني آنکھو سے حضور کي پيشاني مبارک پر اکيس کي صبح کو کيچڑ کا اثر ديکھا۔ مشکوہ شريف

حضرت عبادہ بنبن صامت نے حضور سرورکائنات سے ليلتہ القدر کے بارے ميں پوچھا توآپ نے ارشاد فرمايا کہ رمضان المبارک کے آخري عشرہ کي طاق راتوں ميں ہے اکيس ، تئيس، پچيس، ستائيس، انتيس يا رمضان المبارک کي آخري شب ميں جو شخص ايمان کے ساتھ ثواب کي نيت سے اس شب ميں عبادت کرے اسکي تمام پچھلے گناہ بخش دئيے جاتے ہيں، اس شب ميں عبادت کرے ، اس کےتمام پچھلے گناہ بخش دئيے جائيں ہيں، اس شب کي منجملہ اور نشانيوں کے يہ ہے کہ وہ رات کھلي ہوئي چمکدار ہوتي ہے، صاف شفاف نہ زيادہ گرم نہ زيادہ ٹھنڈي بلکہ معتدل گويا کہ اس ميں چاند کھلا ہوا ہے، اس شب ميں صبح تک آسمان کے ستارے شياطين کو نہيں مار جاتے نيز اسکي نشانيوں ميں سے يہ بھي ہے کہ اس کے بعد کي صبح کو سورج بغير شعاع کے طلوع ہوتا ہے، ايسا بالکل ہموار ٹيکہ کي طرح ہوتا ہے، جيسا کہ چودھويں رات کا چاند ، اللہ تعالي نے اس دن کے سورج کے طلوع کے وقت شيطان کو اسکے ساتھ نکلنے سے روک ديا، برخلاف باقي دنوں کے طلوع آفتاب کے وقت شيطان کا س جگہ سے ظہور ہوتا ہے۔

اکيسويں شب۔

رمضان المبارک کي اکيسويں شب کو اکيس مرتبہ سورہ قدر پڑھنے سے ثواب عظيم ملتا ہے، رمضان المبارک کي اکيسويں رات کو دو رکعت نفل نماز اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک ايک مرتبہ سورہ قدر اور تين تين مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے، سلام پھيرنے کے بعد ستر مرتبہ درود پاک اور ستر مرتبہ استغفار پڑھے باري تعالي گناہوں کي معافي عطا فرمائے گا، اکيسويں شب کو ہي چار رکعت نفل نماز دو رکعت کرکے اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک مرتہ سورہ القدر اور ايک مرتبہ سورہ اخلاص، سلام پھيرنے کے بعد ستر مرتبہ درود پاک پڑھے، اللہ تعالي کے فضل و کرم سے فرشتے اسي نماز کے پڑھنے والے کي مغفرت کيلئے دعا کريں گے۔

تيئيسويں شب۔

رمضان المبارک کي تئيسويں شب کو نماز عشا و نماز تراويح کي ادائيگي کے بعد ايک ايک مرتبہ سورہ يسن اور ايک مرتبہ سورہ رحمن پڑھنا باعث برکت و فضيلت ہے، تئيسويں شب کوچار رکعت نفل نماز دو رکعت اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک مرتبہ سورہ قدر اور تين مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے، نماز سے فارغ ہونے کے بعد نہايت توجہ و يکسوئي کے ساتھ ستر مرتبہ درود پاک پڑھے ، بفضل تعالي گناہوں کي معافي ہوگي۔

تئيسويں رات کو ہي آٹھ رکعت نفل نماز دو دورکعت کرکے اس طرح سے پڑھيں کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک ايک مرتبہ سورہ قدر اور ايک ايک مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے، نماز سے فارغ ہونے کےبعد ستر مرتبہ کلمہ تمجيد پڑھے اور بارگاہ الہي ميں دعا مانگے پروردگار عالم سے اپنے گناہوں کي معافي مانگے بفضل اللہ تعالي گناہوں کي معافي ہوگي۔

پچيسويں شب۔

رمضان المبارک کي پچيسويں شب رات کو سات مرتبہ سورہ فتح پڑھنا فضيلت و برکت کا باعث ہے پچيسويں شب کو دور رکعت نفل نماز اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک ايک مرتبہ سورہ قدر اور پندرہ پندرہ مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے، نماز سے فراغت کے بعد ستر مرتبہ کلمہ شہادت پڑھے، انشا اللہ قبر کے عذاب سے نجات ملے گي۔

رمضان المبارک کي پچيسويں رات کو چار رکعت نفل نماز دو دو رکعت کرکے اسطرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک ايک مرتبہ سورہ قدر اور پانچ پانچ مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے، نماز مکمل کرنے کے بعد ايک سو مرتبہ کملہ طيبيہ پڑھے، بفضل تعالي ثواب عظيم حاصل ہوگا۔پچيسويں شب کي رات کو ہي سات مرتبہ سورہ خان پڑھنے سے بفضل باري تعالي قبر سے حفاظت رہتي ہے۔

ستائيسيوں شب۔

حضرت عمر سے مروي ہے کہ حضور ارشاد فرماتے ہيں کہ جس نے رمضان المبارک کے مہينہ کي ستائيسيويں رات صبح ہونے تک عبادت ميں گزاري وہ مجھے رمضان المبارک کي تمام راتون کي عبادت سے زيادہ پسندہ ہے، حضرت فاطمہ نے عرض کي اے ابا جان وہ ضعيف مرد اور عورتيں کيا کريں، جو قيام نہيں کرسکتي ہيں، آپ نے فرمايا کہ وہ تکئے نہيں رکھ سکتے جن کا سہارا ليں اور اس رات کے لمحات ميں سے کچھ لمحات بيٹھ کر گزاريں اور اللہ تعالي سے دعا مانگيں ليکن يہ بات اپني امت کے تام ماہ رمضان ميں گزارنے سے زيادہ محبوب ہے۔

حضرت عائشہ صديقہ سے مروي ہے کہ حضور نبي کريم نے فرمايا کہ جس نے شب قدر جاگ کر گزاردي اور اس ميں دو رکعت نفل نماز ادا کي اور اللہ تعالي سے بخشش مانگي تو اللہ تعالي نے اسے بخش ديا اسے اپني رحمت ميں جگہ ديتا ہے اور جبرئيل نے اس پر اپنے پر پھيرے اور وہ جنت ميں داخل ہو۔

رمضان المبارک کي ستائيسيوں شب کو جو کوئي دو رکعت نفل نماز اس طرح سے پڑھے کے ہر رکعت ميں سورہ فاتحح کےبعد سات سات مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے نماز سے فارغ ہونے کےبعد ستر مرتبہ يہ تسبيح پڑھے۔

استغفراللہ العظيم الذي لا الہ الا ھواالحي القيوم واتوب اليہ۔

انشا اللہ اس کے ماں باپ اور اسکے گناہوں کي بخشش ہوجائے گي، پروردگار عالم اسکے والدين کي مغفرت فرمائيں گے، اور اسے جنت ميں اعلي مقام عطا فرمائيں گے، اس کے علاوہ اس نماز کے پڑھنے والے کو نيکي کے کاموں کے کرنے کي توفيق عطا فرمائے گا۔

جو کوئي رمضان المبارک کي ستائيسيويں شب کو چار رکعت نفل نماز اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک مرتبہ سورہ قدر اور ستائيس مرتبہ سورہ اخلاص پڑھےتو بفضل تعالي اسکے تمام گناہ معاف ہوجاتے ہيں اور اسکے مرنے کے بعد انشا اللہ جنت ميں اعلي مقام عطا ہوگا۔

جو کوئي رمضان المبارک کي ستائيسيويں شب کو سات مرتبہ سورہ ملک پڑھے تو پروردگار عالم اسکے گناہوں کي معافي عطا فرمائے گا اور اسے نيکي کے کاموں کے کرنے کي توفيق مرحمت فرمائے گا۔

اگر کوئي رمضان المبارک کي ستائيسيوں شب کوچار رکعت نفل نماز اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد تين تين مرتبہ سورہ قدر اور پچاس مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے اور پھر نماز سے فارغ ہونے کے بعد بارگاہ الہي ميں سجدہ ريز ہوکر نہايت يکسوئي کے ساتھ دعا مانگے جو بھي جائز دعا ہوگي قبول ہوگي۔

رمضان المبارک کي ستائيسيويں رات کو چار رکعت نفل نماز دو دو رکعت کرکے اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک ايک مرتبہ سورہ التکاثر اور تين تين مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے، بفضل تعالي جب موت کا وقت ہوگا تو اس پر سے موت کي سختي و شدت آسان ہوجائے گي اور اللہ تعالي اپنے فضل و کرم سے قبر کا عذاب معاف کردے گا۔

رمضان المبارک کي ستائيسيويں شب کو جو کوئي ساتوں حم پڑھے تو انشا اللہ تعالي اسے گناہوں کي معافي عطا ہوگي۔ جو کوئي رمضان المبارک کي ستائيسيوين شب کو دو رکعت نفل نماز اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک ايک مرتبہ سورہ الم نشرح اور تين تين مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے اور سلام پھيرنے کے بعد ستائيس مرتبہ سورہ قدر پڑھے تو انشا اللہ اسے ثواب عظيم حاصل ہوگا۔

انيتسويں شب۔

جو کوئي رمضان المبارک کي انيتسويں شب کو سات مرتبہ سورہ واقعہ پڑھے تو بفضل باري تعالي اس کے رزق ميں خوب اضافہ ہوگا۔

رمضان المبارک کي انيتسيوں رات کو جو کوئي چار رکعت نفل نماز دو رکعت کرکے اس طرح سے پڑھے کے ہر رکعت ميں سورہ اخلاص پڑھے اور نماز سے فارغ ہونے کے بعد ستر مرتبہ سورہ الم نشرح پڑھے تو انشا اللہ اسے ايمان کي سلامتي اور ايمان کي مظبوطي عطا ہوگي، جب دنيا سے جائے گا تو ايمان کي سلامتي کي ساتھ جائيگا۔

رمضان المبارک کي انيتسيويں شب کو جو کوئي چار رکعت نفل نماز دو دو رکعت کرکے اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک ايک مرتبہ سورہ قدر اور پانچ پانچ مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے، پھر جب نماز پڑھ لے تو ايک سو مرتبہ درود پاک پڑھے، انشا اللہ اس کو بارگاہ الہي سے گناہوں کي معافي ہوگي پروردگار عالم اسے خصوصي فضل و کرم سے نوازے گا۔

جمعتہ الوداع۔

جو کوئي جمعتہ الوداع کے دن يعني رمضان المبارک کے آخري جمعتہ المبارک کو نماز جمعہ کے بعد چار رکعت نفل نماز دو دو رکعت کرکے اس طرح سے پڑھے کہ پہلي رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد تين مرتبہ سورہ کافرون پڑھے، پھر سلام پھيرنے کے بعد گيارہ مرتبہ درود پاک پڑھے، اسکے بعد دو رکعت نفل نماز پڑھنےکيلئے کھڑا ہو اور پہلي رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد ايک مرتبہ سورہ التکاثر اور دس مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے دوسري رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد تين مرتبہ آئيتہ الکرسي اور پچيس مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے، پھر جب سلام پھيرےتو گيارہ مرتبہ درود پاک پڑھے اور نہايت توجہ سے کے ساتھ اللہ تعالي کے حضور دعا مانگے، انشا اللہ ثواب عظيم حاصل ہوگا اور ديني و دنياوي حاجات جلد پوري ہونگي۔

آخري شب۔

رمضان المبارک کي آخري شب کو چاہئيے کہ دس رکعت نفل نماز دو رکعت کرکے اس طرح سے پڑھے کہ ہر رکعت ميں سورہ فاتحہ کے بعد تين تين مرتبہ سورہ اخلاص پڑھے سلام پھيرنے کے بعد ايک ہزار مرتبہ استغار پڑھے اور سجدہ ريز ہوکر يہ دعا پڑھے۔

يا حي يا قيوم يا ذلجلال ولاکرام يارحمن يارحيم الدنيا ولاخرتھ يا ارحم الراحمين يا الہ الاولين والاخرين گفرلي ذنوبي وتقبل صلوتي وصيا محي و قبامي۔

بفضل باري تعالي گناہوں کي معافي ہوگي۔


Naats by most popular Naat Khawan on Online Naats

Online Naats Online Naats Online Naats Online Naats Online Naats
Aamir Liaquat Hussain Farhan Ali Qadri Khurshid Ahmad Owais Raza Qadri Waheed Zafar Qasmi


Ramadan Home Articles & FAQs Ramadan Duas & Wazaif Recite Quran
Lectures & Bayans Shab-e-Barat Shab-e-Qadr Eid-ul-Fitr
Ramadan Wallpapers Ramadan Recipes Muslim Baby Names Naats / Nasheed Online
One Pakistan - Pakistan News & General Entertainment Web Portal

Mobile RSS / Alerts Sitemap
Get Social with Us!

Use of this site is governed by our Terms and Privacy Policy | About | Copyright | Contact

© Onepakistan.com 2012. All rights reserved.